یورک ایسڈ کا علاج

اگر آپ کو یورک ایسڈ کی مسئلہ ہے، تو یہاں کچھ عام دیسی علاجات پیش کیے جا رہے ہیں:

  1. معدہ کو خالی رکھیں: یورک ایسڈ کے علاج کے لئے اہم ہے کہ معدے کو خالی رکھیں۔ پیٹ میں کچا نمک، تیز مصرف کی کافی، چائے، کافی، اور تیلیوں سے پرہیز کریں۔
  2. شہد استعمال کریں: روزانہ دو چائے کے چمچ شہد کا استعمال کریں۔ شہد معدے کو ملائم کرتا ہے اور یورک ایسڈ کے علامات کو کم کرتا ہے۔
  3. سونف استعمال کریں: سونف کے بیج کو چابون سے چبائیں یا سونف کا پانی استعمال کریں۔ سونف معدے کو ٹھنڈک پہنچاتا ہے اور ایسڈ کو کم کرنے میں مدد کرتا ہے۔
  4. پودینہ استعمال کریں: پودینہ کا چائے بنا کر پیں یا پودینہ کے پتوں کو پانی میں بھگو کر پیں۔ پودینہ معدے کو تسکین پہنچاتا ہے اور ایسڈیٹی کو کم کرتا ہے۔
  5. خودکش طرز کا چاول استعمال کریں: بھٹ کا چاول کو دھوکر ۳-٤ گھنٹے بھیگو کر رکھیں، پھر اس کو چان کر پی لیں۔ چاول معدے کو سوزش سے نجات دیتا ہے اور یورک ایسڈ کو کم کرتا ہے۔
  6. اعلیٰ سرخ موسلی استعمال کریں: روزانہ اعلیٰ سرخ موسلی کے نصف چائے کے چمچ کو میٹھے پانی کے ساتھ استعمال کریں۔ یہ معدے کو ملائم کرتا ہے اور ایسڈ کو کم کرتا ہے۔
  7. آلو کا رس استعمال کریں: آلو کو بھیگو کر رس بنا کر استعمال کریں۔ آلو کا رس معدے کو لطف اندوز کرتا ہے اور ایسڈ کو کم کرتا ہے۔

یہاں رکھیں کہ یہ دیسی علاجات ہیں اور سرکاری یا پیشہ ورانہ صحت کے متعلق تشخیص کے بغیر استعمال کرنا غلط ہوسکتا ہے۔ اگر آپ کو یورک ایسڈ کی مسئلہ ہے تو بہتر ہوتا ہے کہ آپ ایک معالج سے رابطہ کریں تاکہ مناسب تشخیص اور علاج کیا جاسکے۔

یورک ایسڈ کا علاج

یورک ایسڈ کا فوری علاج

یورک ایسڈ کی فوری علاج کے لئے درج ذیل تدابیر کارآمد ثابت ہوسکتی ہیں:

  1. پانی پیں: یورک ایسڈ کی صورت میں پانی پینا فوری آرام دے سکتا ہے۔ چھوٹے ٹکڑوں میں آرامدہ گرم پانی پیں یا نمک کے چند قطرے شامل کریں۔ یہ آپ کے معدے کو تسکین پہنچائے گا اور ایسڈ کی تنش کو کم کرے گا۔
  2. بیکن سوڈا استعمال کریں: بیکن سوڈا (سوڈیم بیکربونیٹ) ایسڈ کو نیوٹرلائز کرنے کے لئے مددگار ہوسکتا ہے۔ ایک چائے کے چمچ بیکن سوڈا کو گرم پانی میں حل کریں اور آہستہ آہستہ پیں۔ یہ معدے کو آرام دے گا اور ایسڈ کی تشدد کو کم کرے گا۔
  3. دودھ پیں: دودھ ایسڈیٹی کو کم کرنے کے لئے مددگار ثابت ہوسکتا ہے۔ گرم دودھ پیں یا دودھ کو ملا کر پی لیں۔ دودھ معدے کو لطف اندوز کرتا ہے اور ایسڈ کو نیوٹرلائز کرتا ہے۔
  4. سوکھی روٹی یا بسکٹس چبائیں: سوکھی روٹی یا بسکٹس چبانا بھی ایسڈ کو کم کرنے میں مددگار ثابت ہوسکتا ہے۔ یہ ضرورت کے وقت معدے کو آرام دے گا اور ایسڈ کی تنش کو کم کرے گا۔
  5. بابونہ کے چائے کا استعمال کریں: بابونہ کے چائے کو گرم پانی میں بنا کر پیں۔ بابونہ معدے کو تسکین دیتا ہے اور ایسڈ کو کم کرتا ہے۔
  6. آلو کا رس استعمال کریں: آلو کو بھیگو کر رس بنا کر استعمال کریں۔ آلو کا رس معدے کو آرام دے گا اور ایسڈ کو کم کرے گا۔
  7. چھوٹے مقدار میں نیمبو کا استعمال کریں: نیمبو کو ٹکڑوں میں کاٹ کر اس کو چاٹیں یا اس کا رس استعمال کریں۔ نیمبو معدے کو تسکین پہنچائے گا اور ایسڈ کی تنش کو کم کرے گا۔

اگر یورک ایسڈ کے علامات بہت زیادہ ہیں یا آپ کو اس سے متعلق دیگر مسائل ہیں، تو بہتر ہوتا ہے کہ آپ ایک معالج سے مشورہ کریں تاکہ مناسب تشخیص اور علاج کیا جاسکے۔

یورک ایسڈ کا ٹیسٹ

یورک ایسڈ کا ٹیسٹ “اسوفیجوس” (Esophagus) کی خارجی دیوار سے مختلف نمونے لیتے ہوئے کیا جاتا ہے تاکہ معدے کی ایسڈیٹی کا تشخیص لگایا جا سکے۔ یہ ٹیسٹ کچھ مختلف طریقوں سے کیا جا سکتا ہے:

  1. اسوفیجوگاستروڈوڈینوسکوپی (Esophagogastroduodenoscopy، EGD): یہ ٹیسٹ معروف تشخیصی طریقوں میں سے ایک ہے۔ اس کے دوران، معالج ایک فلیکسیبل ٹیوب کو منہ کے ذریعے اسوفیجوس (معدے کا راستہ) میں ڈالتا ہے۔ اس ٹیوب کے ذریعے، ایسڈیٹی کا تشخیص لگایا جا سکتا ہے اور لوٹ کر نمونے لیے جا سکتے ہیں۔
  2. ٹرانسناسلوارجیوفیجیل ریفلکس میٹری (Transnasal Esophageal pH Monitoring): یہ ٹیسٹ نیز یورک ایسڈ کی تشخیص میں استعمال ہوتا ہے۔ اس میں ناک کے ذریعے ایک نازک ٹیوب ٹھوڑی دور اسوفیجوس میں چھوڑا جاتا ہے۔ یہ ٹیوب ایسڈ کی مقدار کو ناپتا ہے اور یورک ایسڈ کا تشخیص لگاتا ہے۔
  3. ایسوفیجیل امپڈومیٹری (Esophageal Impedance Monitoring): یہ ٹیسٹ بھی یورک ایسڈ کا تشخیص لگانے کے لئے استعمال ہوتا ہے۔ اس میں ایسوفیجوس میں چند سٹریم ٹھوڑی دور چھوڑے جاتے ہیں جو ایسڈ کی حرکت کو ناپتے ہیں۔ یہ ٹیسٹ ایسڈیٹی کے علاوہ اسوفیجوس کی حرکت کا تشخیص بھی کرسکتا ہے۔

یہ تشخیصی طریقے صرف معالج یا ماہرِامراض معدہ کی ہدایات کے تحت اور مناسب آلات استعمال کرتے ہوئے کیے جاتے ہیں۔ یورک ایسڈ کے تشخیص کے لئے، آپ کو اپنے معالج سے مشورہ کرنا چاہئے تاکہ وہ آپ کو مناسب ٹیسٹ کا انتخاب کرسکیں۔

یورک ایسڈ کا ٹیسٹ

یورک ایسڈ کی علامات

یورک ایسڈ کی علامات معدے کے ایسڈ کی بڑتی ہوئی مقدار کے باعث پیدا ہوتی ہیں۔ یہ علامات عام طور پر منہ سے شروع ہوتی ہیں اور ذیل میں دی گئیں ہیں:

  1. حرقان: یورک ایسڈ کی ایک عام علامت حرقان ہے۔ معدے میں بڑھی ہوئی ایسڈیٹی منہ میں بھاریپن کا احساس پیدا کرتی ہے جو حرقت کا باعث بن سکتی ہے۔
  2. تیزابیت: معدے کی زیادہ ایسڈیٹی کی وجہ سے ٹھوکریں تیزابی ہوسکتی ہیں۔ یہ تیزابیت زبان پر، منہ کے اندر اور ذائقے کو متاثر کرسکتی ہے۔
  3. ریج: ریج یا اپھارہ بھی یورک ایسڈ کی علامت ہوسکتی ہے۔ اس کا باعث معدے میں بڑھی ہوئی ایسڈیٹی کی وجہ سے ہوتا ہے۔
  4. منہ کا تلخ پن: زیادہ ایسڈیٹی کی صورت میں منہ کا ذائقہ تلخ ہوسکتا ہے۔
  5. چھاتی میں جلن: یورک ایسڈ کی وجہ سے معدے کا ایسڈ چھاتی تک بڑھ سکتا ہے جس سے چھاتی میں جلن کا احساس پیدا ہوتا ہے۔
  6. پھریں: اگر معدے کی ایسڈیٹی زیادہ ہو تو پھریں ہوسکتی ہیں۔ یہ جلن اور احساسِ معدے میں بھاریپن کے ساتھ ہوتی ہیں۔
  7. گلے میں تکلیف: معدے کی زیادہ ایسڈیٹی گلا میں تکلیف کا باعث بن سکتی ہے۔ گلا خشک یا آڑو ہوسکتا ہے اور آڑو کے خارج ہونے کا احساس ہوسکتا ہے۔
  8. اکڑاہٹ: زیادہ ایسڈیٹی کی صورت میں معدے کی اکڑاہٹ ہوسکتی ہے۔ یہ احساس آپ کو ایسا لگ سکتا ہے جیسے معدے میں کچی ٹھوکریں ہوں۔

یورک ایسڈ کی علامات اکثر خفیف ہوتی ہیں، لیکن اگر آپ کو یہ مسئلہ بہت زیادہ ہو رہا ہے یا علامات تشدد کررہی ہیں، تو آپ کو ایک معالج سے مشورہ کرنا چاہئے تاکہ درست تشخیص اور علاج کیا جا سکے۔

یورک ایسڈ کی علامات

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Scroll to Top